سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

الصلاۃ خیر من النوم کا جواب

  • 9836
  • تاریخ اشاعت : 2014-02-08
  • مشاہدات : 536

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

الصلاۃ خیر من النوم “ کےجواب میں کیا کہنا چاہئے۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اَلصَّلاَۃُ خَیْرٌ مِّنَ النَّوْمِ‘‘ کے جواب میں ’’اَلصَّلاَۃُ خَیْرٌ مِّنَ النَّوْمِ‘‘ہی کہا جائے گا جیسے ’’اَشْہَدُ اَنْ لاَّ اِلٰہَ اِلاَّ اﷲُ‘‘ کے جواب میں ’’اَشْہَدُ اَنْ لاَّ اِلٰہَ اِلاَّ اﷲُ ‘‘ ہی کہا جاتا ہے دلیل ہے رسول اللہﷺ کا فرمان :

«إِذَا سَمِعْتُمُ الْمُؤَذِّنَ فَقُوْلُوْا مِثْلَ مَا یَقُوْلُ» الحدیث ’’ حَیَّعَلَتَیْنِ‘‘

کا جواب ’’ لاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ اِلاَّ بِاﷲِ‘‘ خاص دلیل کی بنیاد پر ہے ۔ ’’اَلصَّلاَۃُ خَیْرٌ مِّنَ النَّوْمِ‘‘ کے جواب میں ’’صَدَقْتَ وَبَررْتَ وَبِالْحَقِّ نَطَقْتَ‘‘ کہنا رسول اللہﷺسے ثابت نہیں نہ ہی قولاً ، نہ ہی عملاً اور نہ ہی تقریراً۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتوی کمیٹی

محدث فتوی


ماخذ:مستند کتب فتاویٰ