سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(95) مکہ شریف ومدینہ شریف کے علاوہ دوسرے شہر کو لفظ شریف استعمال کرنا؟

  • 6648
  • تاریخ اشاعت : 2013-08-31
  • مشاہدات : 725

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

آجکل لوگ سوائے مکہ شریف ومدینہ شریف کے دوسرے شہروں کو لفظ شریف لگا کر استعمال کرتے ہیں۔ جیسے بغداد  شریف اجمیر شریف۔ (عبیدا للہ از بنگلور خریدار اہل حدیث)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

مکہ یا مدینہ کے ساتھ شریف کا لفظ لکھنا کوئی شرعی حکم نہیں۔  قرآن مجید میں ان دونوںشہروں کا نام خالی آیا ہے۔ إِنَّ أَوَّلَ بَيْتٍ وُضِعَ لِلنَّاسِ لَلَّذِي بِبَكَّةَ مُبَارَكًا وَهُدًى لِّلْعَالَمِينَ-لَئِن رَّجَعْنَا إِلَى الْمَدِينَةِ۔ )شریف کالفظ لکھنا کوئی شرع حکم نہیں۔ بلکہ اپنا اعتقادی شوق ہے۔ اس لئے کسی اور شہر کو کسی واقعی عزت کی وجہ سے شریف کہنا نہ کہنا دونوں برابر ہے۔  نہ ثواب ہے نہ عذاب ہے۔  ہاں اگر ثواب سمجھ کر کہے تو بدعت ہوگا۔ کیونکہ اس کا ثبوت شرع میں نہیں۔

 

 

    ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ امرتسری

جلد 2 ص 74

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ