سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(57) آمین بالجہر سے ناراض ہونا مسلمان کا فعل ہے یا یہودیوں کا

  • 3633
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-06
  • مشاہدات : 449

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

آمین بالجہر سے ناراض ہونا مسلمان کا فعل ہے یا یہودیوں کا حدیث سے کیا ثابت ہے۔؟اور کسی امام یا عالم کے قول سے قرآن وحدیث پر عمل نہ کرنے والا اور جو شخص پیغمبر صاحبﷺ کے عمل کو معیوب سمجھ کر خود عمل نہ کرےاورعمل کرنے والے کو بر ا جانے۔وہ ازروئے قرآن وحدیث کون ہے۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

باد صف عالم اس امر کے کہ آمین بالجہر کہنا فعل نبوی ﷺ ہے۔اس سے ناراض  ہونا مسلمان کا کام نہیں ہے ۔اور حدیث کا حال اوپر بیان ہوچکاہے۔اور جو قول امام کا یا کسی عالم کا یقینا خلاف قرآن وحدیث کے ہو اس  پر رعمل کرنا اور قرآن وحدیث کوچھوڑدینامسلمان کا فعل نہیں ہے۔ اور جو شخص پیغمبر صاحب ﷺ کے حکم کو باوجود اس بات کے کہ یہ حکم نبوی ﷺ ہے۔ معیوب سمجھ وہ شخص مسلمان نہیں ہے۔ اور عالموں کو برا جاننا درست نہیں ہے۔

ھذا ما عندي والله أعلم بالصواب

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 11 ص 183

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ