سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(203) تنظیم کی اطاعت کے لیے بطور دلیل حدیث پیش کرنا

  • 12924
  • تاریخ اشاعت : 2014-08-25
  • مشاہدات : 761

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

«من فارق الجماعة شبرا فمات مات ميتة جاهلية»(بخاری ومسلم)صحيح البخاري كتاب الفتن باب قول النبي صلي الله عليه وسلم سترون بعدي امورا )(7054) صحيح مسلم كتاب الامارة باب وجوب ملازمة جماعة المسلمين (٤٧٨٦) الي ٤٧٩٣ والصحيحه (٩٨٣)

کیا یہ  حدیث  مو جو د  ہ دور  کی تنظیمو ں  کے متعلق  اللہ  کے نبی  صلی اللہ علیہ وسلم  نے بیان  فر ما ئی  ہے ؟  کیو ں  کہ آج  کل  ہر "امیر " اسے  اپنی تنظیم اور اطاعت  کےلیے  بطو ر  دلیل  پیش کرتا ہے  اس حدیث  کا صحیح  مطلب  کیا  ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

حدیث  ہذا  اپنی  جگہ  بر حق  ہے لیکن  اس کا تعلق  امامت  کبری  سے ہے  جا ہلیت  کی مو ت  کی وعید  اس صورت  میں ہے  جب با اختیا ر  امام مو جو د ہو  اب چو نکہ امام نہیں  اس لیے  وعید  بھی نہیں ۔

ھذا ما عندي واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص505

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ