سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(388) خرگوش کی حلت پر قرآن وحدیث سے دلیل

  • 12373
  • تاریخ اشاعت : 2014-06-15
  • مشاہدات : 473

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
خرگوش کےحلال ہونے پر قرآن وحدیث کے کوئی صریح ثبوت ملتا ہے؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

خرگوش کےحلال ہونے پر قرآن وحدیث کے کوئی صریح ثبوت ملتا ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

دین اسلام میں حرام چیزوں کی نشاندہی کردی گئی ہے اور اس کے اصول بتادئیے گئے ہیں۔ جن کے تحت خرگوش حرام اشیاء کے ضمن میں نہیں آتا ۔ خرگوش حلال ہے کیونکہ حضرت ابو طلحہ ؓ کے پاس ایک دفعہ خرگوش لایا گیا آپ نے اسے ذبح کیا اور کچھ گوشت رسو ل اللہﷺ کےلئے آپ کے گھر بھیجا آپ نے اسے تناول فرمایا۔ (صحیح بخاری، کتاب الصید:۵۵۳۵)

جن روایات میں اس کے خون کی وجہ سے اسے نہ کھانے کا ذکر ہے وہ صحیح نہیں ہیں۔ حافظ ابن حجرؒ لکھتے ہیں کہ مذکورہ حدیث سے خرگوش کا گوشت کھانے کا جوا ز فراہم ہوتا ہے۔ تمام علما کا بھی یہی فتویٰ ہے، البتہ حضرت عبداللہ بن عمرؓ کی طرف سے اس کی کراہت منقول ہے۔ (فتح الباری:۶۶۲/۹)

اس لئے خرگوش کےحلال ہونے میں کوئی شبہ نہیں ہے۔ شیعہ حضرات کے کہنے سے اس کےمتعلق اندیشائے دوردراز میں مبتلا نہیں ہونا چاہیے۔ (واللہ اعلم )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج2ص390

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ