سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(428) حدیث اور کتب حدیث پر تنقید کرنا

  • 11703
  • تاریخ اشاعت : 2014-05-17
  • مشاہدات : 1082

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

نور پور سے حا فظ  مقصو د  احمد  لکھتے  ہیں  کہ ایک شخص  حدیث  اور کتب حدیث  پر اس طرح  تنقید  کر تا  ہے  کہ ان  کی تو ہین  کا  پہلو  نما یا ں ہوتا  ہے  نیز  وہ حضرت حسن رضی اللہ  تعالیٰ عنہ اور حضرت  حسین  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ  کی صحا بیت  کا بھی  منکر  ہے اس  کے علا وہ  وہ کہتا  ہے کہ اسلا م  میں پہلا  اختلا ف  حضرت علی   رضی اللہ  تعالیٰ عنہ نے ڈالا کیا اس  طرح  کے عقا ئد  رکھنے  والے  کو مسجد  کا ممبر  بنا یا  جا سکتا  ہے با لخصوص  جب کہ  اند یشہ  ہو کہ  یہ اپنے فا سد عقا ئد  و نظر یا ت  دوسر ے  نما زیو ں  میں بھی  پھیلا ئے  گا  ایسے  شخص  کے سا تھ  تعلقا ت  رکھنا  شر عاً کیسا  ہے کیا  ایسے  شخص  کو سلا م  کر نا  یا اس کے  سلا م  کا جو اب  دینا  درست  ہے کیا  ایسے  شخص  کو زند یق  کہا جا سکتا  ہے   نیز  ز ند یق  کی شرعی  طو ر  پر  سزا  کیا ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

واضح  ہو کہ  دین اسلا م  کی بنیا د  قرآن  اور اس  کے  بیا ن (حدیث)پر ہے  بیان  قرآن  کے لیے  اللہ تعا لیٰ  نے  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کو معبو ث  فر ما یا  ہے آپ  نے اپنے  فرمو دا ت  وار شادا ت  اور سیر ت و کرا دار  سے  قرآن  کریم  کی وضا حت  اور تشر یح   کی ہے  جو  ہما ر ے  پا س  کتب  حدیث  کی شکل  میں مو جو د  ہے  لیکن  دور حا ضر  کے  متجد دین  کتب  حدیث  کو ہد ف  تنقید  بنا  کر  نہ صرف  ان  دفا تر  حدیث  کی تو ہین  کا ارتکاب  کر تے ہیں بلکہ  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   سے وہ اعزاز  بھی  چھیننا  چاہتے  ہیں  جو خو د اللہ تعا لیٰ  نے آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   کو عطا  فر ما یا  ہے درا صل بات  یہ ہے کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کے فر مو دا ت  کے ذریعہ  قرآن  کے اجما ل  کی تفصیل  اور اطلا ق  کی تنقید  ان  معتزلہ  کو گو ار ا نہیں  وہ صرف  اپنی  عقل  عیا ر  کو بنیا د  بنا  کر قرآن  کر یم  کی تشریح  کر نا  چا ہتے  ہیں  تا کہ  اللہ تعا لیٰ  کی طرف  سے نا ز ل  شدہ  اس ضا بط  خیا ت  کو اپنی  من  ما نی  تاویلا ت  کی بھینٹ  چڑھا  یا  جا سکے  ان نز دیک حدیث  اور کتب  حدیث  ایک "عجمی سا ز ش" کا حصہ  ہیں  صورت  مسئولہ  میں ایک  ایسے  شخص  کے  متعلق  دریا فت  کیا گیا  ہے  جو تو ہین  رسا لت  کے علا وہ  صحا بہ کرا م    رضوان اللہ عنہم اجمعین  کو بھی  عز ت  کی نگا ہ  سے نہیں  دیکھتا  بلکہ  حضرت  علی  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ  کو تشتت و اختلا ف  کا مو جب  گر دا نتا  ہے  ایسے  ہی لو گو ں  کے متعلق  ارشا د با ر ی  تعا لیٰ ہے ایسے  لو گو ں  کے سا تھ  مت بیٹھیں  تا آنکہ  وہ  کسی دوسر ی  با ت  میں  لگ  جا ئیں ۔(4/النسا ء : 40)

ایسے شخص کو کسی مسجد یا دینی  جما عت  کا ممبر  بنانا  جا ئز  نہیں ہے اس کے  سا تھ  تعلقا ت  اصلا ح  احو ال  کے لیے تو رکھے  جا سکتے  ہیں لیکن  جب اس قسم  کے گند ے  جر اثیم  آگے  منتقل  ہو نے  کا اند یشہ  ہو تو  ایسے  عضو  کو کاٹ دینا ہی بہتر ہو تا ہے  یعنی  ایسے شخص  سے  رو ابط  ختم  کر لیے  جا ئیں  ایسے  شخص  کو سلا م  کر نے  میں ابتدا  نہیں کر نی  چا ہیے  البتہ  اگر  وہ  سلا م  کہتا  ہے تو  اس کا جو اب  دیا  جا سکتا  ہے  بلا شبہ  ایسا  انسا ن  زند یق  اور ملحد  ہے  اور اسلا می  حکو مت  میں ایسے  شخص  کی سزا  قتل  ہے اور اس قسم  کی سزا  کا نفا ذ بھی اسلا می  حکو مت  کا کا م ہے ۔(واللہ اعلم )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:439

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ