سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(316) منگنی ٹورنا

  • 11566
  • تاریخ اشاعت : 2014-05-05
  • مشاہدات : 501

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

حافظ آباد سے ضیاء اللہ سوال کر تے ہیں  کہ جو شخص  اپنے بیٹے  یا بیٹی  کی منگنی  کر ے  کچھ عرصے بعد  اسے تو ڑ  دیتا ہے  اس کے متعلق  شریعت  کیا حکم  دیتی ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

منگنی کرنا وعدہ  نکا ح   ہے اس  سے نکا ح نہیں  ہو تا  ایک  مسلما ن  کے لیے   اس کا ایفا  ضروری ہے  بلا و جہ  خلا ف  ورزی  کر نا منا فقا نہ  روش  ہے تا ہم  اگر  کو ئی  شرعی  عذر  ہو تو  اس وعدے  کو ختم  کیا جا سکتا  ہے لیکن  جھو ٹی  عز ت  اور انا نیت  کی خا طر  وعدہ خلا فی  کر نا جر م ہے شر عی  مجبوری  کی بنا  پر وعدہ  خلا فی  کر نے  کی مثا ل  پہمیں  ملتی  ہے کہ  کہ  حضرت  جبرائیل  علیہ السلام  نے ایک دفعہ  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کے پا س  گھر  میں آنے  کا وعدہ  کیا لیکن  وہ  حسب  وعدہ  نہ  پہنچے  جس  سے آپ   صلی اللہ علیہ وسلم  کو بہت  قلق ہوا  جب رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  با ہر  تشریف لا ئے  تو حضرت جبرائیل   علیہ السلام  سے  ملا قات  ہو ئی  آپ نے  حضرت  جبرا ئیل علیہ السلام  سے گھرا نہ آنے  کا شکو ہ  کیا تو  انہو ں  نے جوا ب  دیا  کہ ہم ایسے  گھر  نہیں  جا تے  جس  میں  کتا  اور تصویر ہو ۔(صحیح بخا ری :کتا ب  اللبا س 5960)

اس کی تفصیل حضرت عا ئشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ   بیا ن  کر تی  ہیں  کہ آپ  کے ہا تھ  میں ایک چھڑی  تھی آپ  نے اسے  پھینکتے  ہو ئے  فر ما یا :" کہ اللہ  اور اس  کے  فرستا دہ وعدہ خلا فی  نہیں کر تے  ضرور  کو ئی  با ت ہے  اچا نک  آپ  کی نظر  کتے  کے  بچے  پر پڑی  جو چا ر  پا ئی  کے نیچے  چھپا  بیٹھا  تھا آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے اسے  نکا لنے  کا حکم  دیا  تب حضرت  جبر ائیل   علیہ السلام   تشریف  لا ئے  آپ  نے تا خیر  کا سبب پو چھا  تو  جوا ب دیا  کہ آپ  کے گھر  میں کتے  کی مو جو د گی  میر ے  آنے  میں رکاوٹ  کا با عث  ہو ئی  کیو ں  کہ ہم  اس گھر  میں نہیں  جاتے  جہا ں  کتا  یا تصو یر  ہو ۔(صحیح مسلم ؛اللبا س 5511)

اس واقعہ  سے معلو م  ہو ا  کہ  معقو ل  شر عی  عذر  کی وجہ  سے  اگر  وعدہ  پورا نہ ہو سکے  تو اس  پر  مو اخذہ نہیں  ہو گا  ممکن  ہے  کہ جس  نے  اپنی  بیٹی  دینے کا وعدہ  کیا ہے  اسے  لڑکے  میں کو ئی  دینے  کا وعدہ  کیا ہے  اسے لڑکے  میں کو ئی   دینی  عیب  یا  کو ئی  خرا بی  نظر  آئی  ہو  جس  کی بنا  پر  وہ  وعدہ  خلا فی  کر نے  پر مجبو ر ہو ا  ہے ہمیں  اسے  الزا م  دینے  کے بجا ئے  اپنے  آپ  پر غور  کر نا چا ہیے ۔(واللہ اعلم)

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:337

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ