سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(178) غسل کیے بغیر سحری کھانا

  • 11331
  • تاریخ اشاعت : 2014-04-27
  • مشاہدات : 1389

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

پتو کی  سے بشیر  احمد  سوال  کر تے ہیں کہ  اگر  کسی  کو غسل  کر نے  کی ضرورت  ہو اور وقت  تھو ڑ ا ہو نے  کی وجہ  سے نہا ر  ئے  بغیر  سحری  کرے تو  ایسی  حا لت  میں روزہ  صحیح  ہو گا  یا نہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

جنا بت کی حا لت میں روزہ رکھا جا سکتا ہے حدیث میں ہے   کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  بحا لت  جنا بت  روزہ  رکھ لیتے  تھے  ۔(صحیح مسلم :کتا ب الصوم )

اگر چہ  سید  نا ابو ہریرہ  رضی ا للہ تعالیٰ عنہ  کا فتوی  تھا  کہ جنبی  آدمی  غسل  کیے  بغیر  روزہ نہ رکھے  لیکن  ان کے سا منے  جب رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کا عمل آیا تو انہوں  نے فو راً اپنے فتوی سے رجو ع کر لیا ۔(صحیح مسلم :کتا ب الصوم)

سید ہ عا ئشہ رضی ا للہ تعالیٰ عنہا  کا بیا ن ہے کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  جنبی ہو تے  پھر  آپ نہائے بغیر  روزہ رکھ لیتے  سحری  کھا نے  کے بعد  غسل  کر کے  نماز  فجر  ادا کرتے ۔(صحیح مسلم )

 اسی طرح احتلا م سے بھی روزہ خرا ب نہیں ہو تا  اذان  فجر  سے قبل  صحبت  کر نے  سے روزہ  نہیں ٹو ٹتا ہا ں  اگر  اذان  کے بعد  ہم بستری  کرتا  رہا  تو پھر  روزہ  ٹو ٹ جا ئے  گا  اسے  کفا رہ  بھی  دینا  ہو گا  اور  اس  رو ز ہ کی قضا  بھی ضروری ہے ۔

لا ہو ر  سے محمد  اکر م  لکھتے  ہیں  کہ بعض  اسلا می  کتا بو ں  میں  روزہ  رکھنے  کی نیت  لکھی ہو ئی  ہے اس   کی  شر عی  حیثیت  کیا ہے ؟

سوال۔فرض  روزہ  کے لیے  طلو ع  فجر  سے پہلے  نیت  کر نا ضروری  ہے  حدیث  میں ہے  کہ جو طلو ع  فجر  سے پہلے  روزہ  رکھنے  کی  نیت  نہیں کر تا  وہ  روزہ  نہ رکھے ۔(سنن نسا ئی :کتا ب  الصوم )

بعض  روایا ت  میں ہے  کہ اگر  نیت  کے بغیر  روزہ  رکھ  لیتا  ہے تو اس  کا روزہ  نہیں  ہے لیکن  نیت  دل کا  فعل  ہے  اس کے لیے  کو ئی مخصوص الفا ظ نہیں ہیں  جیسا کہ بعض  کتا بو ں  میں لکھا ہو تا ہے  زبا ن  سے نماز  یا  روزہ کی نیت  کر نا بد عت  ہے  جس کا حدیث  سے ثبو ت  نہیں ملتا  صرف اللہ سے ثواب  لینے  کے لیے   دل  سے عزم  کر لینا  ہی  نیت  ہے  پھر  یہ نیت  ہر  روزہ  کے لیے  انفرادی  ہو نی  چا ہیے  چا ند  نظر  آنے  کے بعد  سا رے  رمضان  کے روزوں  کی  اجتما عی نیت   بھی صحیح نہیں  ہے  نفل روزہ کے لیے  بھی نیت ضروری  ہے لیکن  ا س کے لیے ضروری نہیں  ہے کہ اس کے لیے طلو ع  فجر  سے پہلے  نیت کی جا ئے  بلکہ  جب  بھی  روزہ رکھنے  کا پر و گرا م  ہو اسی  وقت نیت کی جا سکتی ہے سید  ہ عا ئشہ  رضی ا للہ تعالیٰ عنہا  کا بیا ن  ہے کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   مجھ سے کسی کھا نے  کی چیز  کے متعلق  دریا فت  فر ما تے  اگر  مو جو  د  ہو تی  تو تنا ول  فرما لیتے  اگر  موجو د  نہ  ہو تی تو فر ما تے میں روزہ رکھ لیتا ہو ں ۔(سنن ابو داؤد )

 اس حدیث کا مطلب یہ ہے کہ نفلی  روزہ  کے لیے  طلو ع  فجر  سے پہلے نیت  کر نا ضروری  نہیں ہے  بلکہ  اس کے  بعد  بھی  نیت  کی جا سکتی ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:207

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ