سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

جو شخص کسی عضو کے دھو نے یا مسح کرنے سے عاجز ہو تو وہ اس کے بجائے تیمم کرے

  • 10117
  • تاریخ اشاعت : 2014-02-18
  • مشاہدات : 564

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اگر انسا ن وضوء کر ے اور اس کے ہا تھ میں زخم ہو جسے پا نی نہیں لگنے دینا  اور وہ اس کے  عوض تیمم کر تا ہے لیکن ایک دفعہ وہ بھول گیا اور اس نے تیمم کے بغیر نما ز شروع کر لی اور اسے اس وقت یاد آیا جب وہ نما ز میں تھا  تو اس نے نماز قطع کئے بغیر ہی تیمم کر لیا اور نماز کو جا ری رکھا تو اس نماز کا کیا حکم ہے ؟ کیا یہ  نما ز با طل ہے یا صحیح ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اگر وضو ء کے مقا ما ت میں سے کسی جگہ زخم ہو کہ اسے دھو نا یا اس پر مسح کر نا ممکن نہ ہو کہ اس سے زخم کے بڑ ھ  جا نے یا شفا یا بی کے مؤ خر ہو نے  کا اندیشہ ہو تو اس شخص کے لئے یہ وا جب ہے کہ وہ  تیمم کر لے جو شخص زخم کی جگہ کو چھو ڑ کر وضو ء کر لے اور نماز شروع کر لے  اور دوران نماز یا د کر لے  کہ اس نے زخم کی جگہ کے بدلے  تیمم نہیں کیا تو وہ تیمم کر لے اور نماز کو دوبا رہ شروع کر لے کیو نکہ زخم کے تیمم کے بغیر اس نے جو نما ز پڑ ھی ہے وہ صحیح نہیں ہے اس کی تکبیر تحریمہ  بھی صحیح نہ ہو گی یعنی نما ز شروع کر نا ہی صحیح نہ  ہو گا کیو نکہ طہارت صحت نما ز کی شرطو ں میں سے ایک شرط ہے اور وضو ء کے مقاما ت میں سے کسی مقا م  یا اس مقا م کے کسی حصہ کو تر ک کر دینے سے وضوء صحیح نہ ہو گا ۔

(راي نبي كريم صلي الله عليه وسلم رجلا في قدمه قدر الدرهم لم يصبه الماء فامره باعادة الوضوء )(سنن ابی داود)

"نبی کر یم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک شخص کو دیکھا  کہ اس کے پا ؤ ں میں ایک درہم کے برا بر جگہ خشک ہے جسے پا نی نہیں پہنچا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم  نے اسے حکم دیا کہ وہ دوبا رہ وضوء کر ے ؛"

 یہ شخص  جس کے با ر ے میں سوال کیا گیا ہے اس کے لئے اگر غسل اور مسح میں دشوا ری اور معذوری ہو تو اس کے لئے وا جب ہے کہ وہ اس کے بد ل  یعنی تیمم کو اختیا ر کر ے حسب ذیل ارشا د  با ر ی تعا لیٰ کے عموم کا یہی تقا ضا ہے ۔

﴿وَإِن كُنتُم مَر‌ضىٰ أَو عَلىٰ سَفَرٍ‌ أَو جاءَ أَحَدٌ مِنكُم مِنَ الغائِطِ أَو لـٰمَستُمُ النِّساءَ فَلَم تَجِدوا ماءً فَتَيَمَّموا صَعيدًا طَيِّبًا فَامسَحوا بِوُجوهِكُم وَأَيديكُم... ﴿٤٣﴾... سورة النساء

اور اگر تم بیما ر ہو یا سفر میں ہو یا تم سے کو ئی بیت الخلا ء سے ہو کر آیا ہو تم نے عو رتو ں سے ہم بستر ی کی ہو اور تمہیں پا نی  نہ ملے تو پا ک مٹی لو اور منہ اور ہا تھو ں کا مسح (کر کے تیمم ) کر لو ۔"

 زخم والے صحا بی کے قصہ سے بھی یہی  معلو م ہو تا ہے حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کی روا یت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم  نے فر ما یا :

( لو غسل جسده وترك راسه حيث اصابه الجراح)(سنن ابن ما جه )

"اسے چا ہئے تھا کہ اپنے جسم کو دھو لیتا اور اور سر میں جہا ں زخم تھا اسے چھو ڑ دیتا ۔"

 اور حضرت جا بر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی روایت میں ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم  نے فر ما یا :

(انما كان يكفيه ان يتمم)(سنن ابی داود)

"اسے تیمم کر نا  ہی کا فی تھا ۔"

اگر اس شخص نے جس کے با ر ے میں سوا ل کیا گیا ہے نما ز کو نہیں دوہرا یا تو اسے دوہرا نا چا ہئے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1ص285

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ