سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(224) بینکوں کے حصص خریدنے کے بارے میں کیا حکم ہے؟

  • 7589
  • تاریخ اشاعت : 2013-11-02
  • مشاہدات : 728

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بینکوں کے حصص خریدنے اورپھر ایک مدت کے بعد ان کے فروخت کردینے کے بارے میں کیا حکم ہے جب کہ اس طرح ایک ہزارکے تین ہزار بن جاتے ہیں،کیا اسے سودقراردیا جائے گا؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

بینکوں کے حصص کی خریدوفروخت جائز نہیں کیونکہ یہ نقدی کے ساتھ بیع ہے اوراس میں تساوی اورقبضہ میں لینے کی شرط مفقود ہےاوپھر بینک سودی ادارے ہیں ان کے ساتھ تعاون اوران کے ساتھ بیع وشراء (خریدوفروخت ) کا معاملہ جائز نہیں ہے ۔

ارشادباری تعالی ہے:

﴿وَتَعَاوَنُوا عَلَى الْبِرِّ‌ وَالتَّقْوَىٰ ۖ وَلَا تَعَاوَنُوا عَلَى الْإِثْمِ وَالْعُدْوَانِ﴾ (المائدۃ۲/۵)

‘‘نیکی اورپرہیزگاری کےکاموں میں ایک دوسرےکی مددکیاکرواورگناہ اورظلم کےکاموں میں مددنہ کیاکرو۔’’

اورحدیث سے ثابت ہے کہ نبی کریمﷺنے سود کھانے ،کھلانے اوراس کے لکھنے والے اوراس کے دونوں گواہوں پر لعنت کی اورفرمایاکہ وہ سب (گناہ میں) برابرہیں’’ (صحیح مسلم)

آپ صرف اپنے اصل زرہی کو لے سکتے ہیں۔آپ کےلئے اورآپ کے علاوہ دیگر مسلمانوں کے لئے میری وصیت یہ ہے کہ تمام سودی معاملات سے اجتناب کریں اورجو کچھ قبل ازیں ہوچکا اس سے اللہ کی بارگاہ میں توبہ کریں کیونکہ سودی معاملات

اللہ سبحانہ وتعالی اوراس کے رسول ﷺکے خلاف جنگ ہیں اور اللہ تعالی کے غضب وعقاب کا باعث ہیں ،ارشادباری تعالی ہے:

﴿الَّذِينَ يَأْكُلُونَ الرِّ‌بَا لَا يَقُومُونَ إِلَّا كَمَا يَقُومُ الَّذِي يَتَخَبَّطُهُ الشَّيْطَانُ مِنَ الْمَسِّ ۚ ذَٰلِكَ بِأَنَّهُمْ قَالُوا إِنَّمَا الْبَيْعُ مِثْلُ الرِّ‌بَا ۗ وَأَحَلَّ اللَّـهُ الْبَيْعَ وَحَرَّ‌مَ الرِّ‌بَا ۚ فَمَن جَاءَهُ مَوْعِظَةٌ مِّن رَّ‌بِّهِ فَانتَهَىٰ فَلَهُ مَا سَلَفَ وَأَمْرُ‌هُ إِلَى اللَّـهِ ۖ وَمَنْ عَادَ فَأُولَـٰئِكَ أَصْحَابُ النَّارِ‌ ۖ هُمْ فِيهَا خَالِدُونَ ﴿٢٧٥﴾ يَمْحَقُ اللَّـهُ الرِّ‌بَا وَيُرْ‌بِي الصَّدَقَاتِ ۗ وَاللَّـهُ لَا يُحِبُّ كُلَّ كَفَّارٍ‌ أَثِيمٍ﴾ (البقرۃ۲/۲۷۵۔۲۷۶)

‘‘جو لوگ سود کھاتے ہیں وہ (قبروں سے) اس طرح (حواس باختہ) اٹھیں گے جیسے کسی کو جن (شیطان) نے لپٹ کردیوانہ بنادیا ہو،یہ اس لئےکہ وہ کہتے ہیں کہ سودابیچنابھی تو (نفع کے لحاظ سے) ویساہی ہے جیسے سود (لینا) ہےحالانکہ سودے (تجارت) کو اللہ نے حلال قراردیا ہے اورسودکوحرام ،جس شخص کے پاس اللہ کی نصیحت پہنچی اوروہ (سودلینے سے) بازآگیاتوجوپہلے ہوچکا وہ اس کا،اور (قیامت کے دن) اس کا معاملہ اللہ کے سپرد۔اورجوپھرلینے لگاتوایسے لوگ دوزخی ہیں وہ ہمیشہ دوزخ میں (جلتے ) رہیں گے۔اللہ سود کو مٹاتا ہے اورصدقات (خیرات) کوبڑھاتا ہے اوراللہ کسی نہ شکرے گناہ گارسے محبت نہیں رکھتا۔’’

اورفرمایا:

﴿يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّـهَ وَذَرُ‌وا مَا بَقِيَ مِنَ الرِّ‌بَا إِن كُنتُم مُّؤْمِنِينَ ﴿٢٧٨﴾ فَإِن لَّمْ تَفْعَلُوا فَأْذَنُوا بِحَرْ‌بٍ مِّنَ اللَّـهِ وَرَ‌سُولِهِ ۖ وَإِن تُبْتُمْ فَلَكُمْ رُ‌ءُوسُ أَمْوَالِكُمْ لَا تَظْلِمُونَ وَلَا تُظْلَمُونَ﴾ (البقرۃ۲/۲۷۸۔۲۷۹)

‘‘مومنو!اللہ سے ڈرواوراگرایمان رکھتے ہوتوجتنا سودباقی رہ گیا ہے۔اسےچھوڑدواوراگرایسا نہیں کروگے تواللہ اوراس کے رسول کے ساتھ جنگ کرنے کے لئے تیارہوجاواوراگر توبہ کرلوگے (اورسودچھوڑ دو گے) توتم کو اپنی اصل رقم لینے کا حق ہے نہ تم ظلم کرو اورنہ تم پر ظلم کیا جائے (یعنی ) جس میں نہ اوروں کا نقصان ہواورنہ ہی تمہارانقصان۔’’

 

 

مقالات وفتاویٰ ابن باز

صفحہ 318

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ